#ترگت_الپ
ترگت الپ کی بچپن عام بچوں کی طرح گزر رہی تھی کہ اچانک تاتاریوں کے خلاف جنگ میں انکے ماں باپ شہید ہوئے اور ان کے دو ساتھی #بامسی_اور_روشان تھے انکے بھی ماں باپ شہید ہوئے تھے منگولوں کے خلاف لڑائی میں,
یہ تینوں 16 سال کی عمر میں ایک پہاڑی میں پناہ گزین تھے, کچھ عرصہ بعد #غازی_ارطغرل جنگی مہارت حاصل کرنے کیلئے پہاڑیوں میں جارہے تھے ان تینوں سے ملاقات ہو گئ اور وہ انہیں قبیلے لے آئے ان تینوں کو وہ بھائی بنانے لگے اور وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ یہ تینوں ارطغرل کے وفادار اور ذاتی محافظ بنے یہ تینوں بہت طاقتور اور بہادر تھے اور ان تینوں میں قابل اور سنجیدہ ترگت تھے,
ترگت تلوار کی جگہ کلہاڑی کو جنگ میں استعمال ہونے کو ترجیح دیتے تھے اور انتہائی مہارت کے ساتھ کلہاڑی سے باطل کو نیست ونابود کرتے تھے, انکے متعلق تاریخ نے لکھا ہے کہ ترگت نے 126 سال عمر پائی تھی ساری زندگی جہاد کیا تھی سینکڑوں جنگیں لڑی تھیں اور ریاست کا وفادار رہے.
ترگت اور ارطغرل قریبا ہم عمر تھے لیکن ارطغرل کی انتہائی عزت کرتے تھے جب ارتغل 90 سال کی عمر میں وفات پا گئے اس کے بعد ترگت #عثمان_اول کے بھی وفادار رہے اور 36 سال عثمان کی حکمرانی میں بھی انہوں نے وفاداری میں کوئی کسر نا چھوڑی,
126 سال میں ترگت نے 5 مختلف کلہاڑی اور 7 تلوار استعمال کیے تھے جو استنبول کے فوجی عجائب گھر میں محفوظ ہے اور انتہائی بڑھاپے کے باوجود بھی جہاد میں مصروف رہے اور 126 سال کی عمر میں شہید ہوئے..

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.