ایک دن شام کو اپنے گھر لوٹی اور شراب کی بوتل اٹھا کر پہلا گلاس بھر لیا.. پھر سوشل میڈیا پر اپنے جعلی اکاونٹ پر جو “ام المؤمنین” کے نام سے عربی زبان میں بنا رکھا تھا، پوسٹ لگائی؛

“کیا عمر ابن خطاب رضی آللہ تعالیٰ عنہ خلافت کے زیادہ حقدار ہیں یا علی بن ابی طالب رضی آللہ تعالیٰ عنہ….؟”

پھر اپنے گلاس سے چند گھونٹ حلق میں اتارے اور بے صبری سے کمنٹس کا انتظار کرنے لگی۔ پہلا کمنٹ عراق سے خضیر نے لکھا:
“یہ عمر ابن خطاب ہے کہ جس نے خلافت کو غصب کیا ہے اور اسکا مستحق نہیں ہے اور تم ناصبی ہو۔”

جواب میں سعودی عرب سے عبد الرحمن نے لکھا:
“یقینا عمر ہی اس کا حقدار ہے اور اے عراقی! اے رافضی! اے کافر! تم اہل سنت کے یہودیوں سے بھی بدترین دشمن ہو۔”

میریا شالوم مسکرائی اور خوشی سے جھومتے ہوئے شراب کا دوسرا گلاس بھی پی لیا۔

تیسرا کمنٹ عبد السمیع نامی مصری جوان نے پوسٹ کیا:

“میں چاہتا ہوں کہ اسکا جواب میں دوں۔ ہاں یہ عمر فاتح شیعہ اور فاتح مجوس ہیں۔”

یوں ایک دوسرے کو جواب دینے کا سلسلہ شروع ہوا اور شیعہ سنی ایک دوسرے کو گالیاں دینے لگے۔ میریا شالوم نے شراب کی بوتل کا ڈھکنا بند کیا اور فاتحانہ مسکراہٹ کے ساتھ اپنے بستر پر لیٹ گئی اور چند لمحوں بعد نیند کی پرسکون وادیوں میں جا چکی تھی۔۔۔۔!

مگر

اس لاحاصل بحث کے نتیجہ میں عراق، مصر اور شام کی پرامن آبادیاں خون کی ندیوں میں ڈوب چکی تھیں۔
(عربی پوسٹ کا ترجمہ)

یہی اس وقت یہاں پاکستان میں چل رہا ہے..
شعیہ, سنی, دیوبندی, بریلوی, وھابی, اور ن لیگی, جیالا, پٹواری, یوتھیا, زیبرا کا کھیل چل رہا ہے..
پاک افواج کو نشانہ بنایا جا رہا ہے..
ہوشیار رہیں.. لاعلمی میں اور ایک لاحاصل بحث۔۔۔
کہیں ہم پاکستان اور تصورِ اُمّہ کو نقصان تو نہیں پہنچا رہے…. ؟؟
ذرا پھر سے سوچیے…!!!

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here