ہمیں کتابوں اور لکچر نوٹس میں یہ بتایا تو جاتا ہے مگر ابھی تک اس کا دستاویزی ثبوت سامنے نہیں آیا۔ میں اس کی تلاش میں رہا۔ باالاخر ایک فائل میں صدر ضیاءالحق کی ایک Directive ملی جو آپ نے9 دسمبر 1979 کو جاری کی ہے۔(دیکھئیے نیچے)۔
صدر ضیاء نے لکھا ہے کہ حال ہی پاکستانی ڈاکٹروں کے وفد نے چین کے دورے کے بعد ان سے ملاقات کی اور بتایا کہ چینی نظام تعلیم میں ہر سطح کے طلباء کو نظریاتی اور سماجی روئے کے مضامین پڑھائے جاتے ہیں۔ صدر لکھتے ہیں کہ کتنی عجیب بات ہے کہ ہم اسلامی جمہوریہ پاکستان کو نظریاتی ملک کہتے ہیں مگر اس پہلو کو نظر انداز کررہے ہیں۔
اس کے بعد آپ نے فوری طور پر ان دو مضامین کو ڈگری اور اس کے بعد کے مراحل میں شامل کرنے کا فوری حکم صادر کیا ہے( حوالہ نمبر No. 57/1/CMLA

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here